افلاس زدہ ملک میں کالے دھن کا بڑھتا گراف


افلاس زدہ ملک میں کالے دھن کا بڑھتا گراف !

        چند سالوں سے ہندوستان میں کالے دھن پر گرفت کسنے کی بات کہی جارہی تھی اور گزشتہ دنوں اس تعلق سے کچھ کوششیں بھی کی گئی ہیں۔ برخلاف اس کہ سوال یہ ہے کہ کیا سوئس بینکوں میں رقم جمع کرانے والوں کو اس بات کا قطعی ڈر نہیں ہے کہ حکومت ہند کالا دھن واپس لانے کی کوششیں کر رہی ہے؟یا پھر وہ اس بات سے بے خوف ہیں کہ یہ کوششیں کامیاب نہیں ہوں گی؟شاید یہی وجہ ہے کہ وہ بلاخوف و خطر اپنا پیسہ سوئس بینکوں میں نہ صرف جمع کروارہے ہیںبلکہ اسے بڑھابھی رہے ہیں۔سوئس مرکزی بینکBJJCنے اطلاع دی ہے کہ حالیہ دنوں سوئس بینکوں میں جمع ہندوستانی دولت میں40فیصد کا اضافہ ہوا ہے۔ سوئزرلینڈ کے مرکزی بینک نے بتایا ہے کہ وہاں کے بینکوں میں ہندوستانیوں کی دولت40فیصد بڑھ کر تقریباً 2.03ارب سوئس فرینکس یعنی تقریباً14000کروڑ روپے ہوگئی ہے۔یہی وجہ ہے کہ حکومت نے غیر ملکی بینکوں میں جمع کالے دھن کو واپس لانے کے لیے اسپیشل ٹاسک فورس بنائی ہے۔ملک کی تمام بڑی جانچ اور خفیہ ایجنسیوں کے صدور کو ملاکر بنی اس ٹاسک فورس کا کام ہے کہ بیرون ملک میں جمع کالے دھن کا پتہ لگائے اور اسے واپس لانے کے طریقے تلاش کرے۔اس سلسلے میں سپریم کورٹ میں کیس چل رہا ہے نیز سپریم کورٹ کی سختی کے بعد ہی مرکزی حکومت نے ٹاسک فورس تشکیل دی ہے۔اس کے باوجود یہ سارے اقدامات سوئس بینکوں میں رقم جمع کروانے والوں کو متاثر نہیں کر پا رہے ہیں۔

        سابقہ یو پی اے حکومت کے دوران بی جے پی ، این ڈی اے و دیگر سیاسی پارٹیوںاور افراد نے ہندوستانیوں کے سوئس بینکوں میں جمع کالے دھن کے خلاف پرزور احتجاج کیا تھا۔اس وقت کانگریس پارٹی نے معاملے کو یہ کہہ کر رد کر دیا تھا کہ ہندوستان کے کالے دھن کی مالیت کے بارے میں جو مختلف حوالے دیے گئے ہیں وہ محض تصوراتی ہیں ۔دوسری جانب اشوک وی دیسائی اور ببیک دیبرائے جیسے سرکردہ ماہر معاشیات نے بھی کالے دھن کے اعداد شمار کو اپنی دلیلوں اور حقائق سے مسترد کر دیا تھا۔ان کا کہنا تھا کہ اگر اڈوانی وزیر اعظم بن جائیں تو بھی غیر ممالک سے وہ نام نہاد کالے دھن کا ایک پیسہ بھی نہیں لا سکیں گے۔ان کا خیال تھا کہ کالے دھن کا معاملہ حقیقی سے زیادہ سیاسی ہے۔برخلاف اس کے اڈوانی کی ٹاسک فورس میں شامل انڈین انسی ٹیوٹ آف مینجمنٹ بنگلور کے پروفیسر آرودیاناتھن کا کہنا تھا کہ گلوبل فینانشل انٹیگریٹی 2006کی رپورٹ میں بتایا گیا ہے کہ 2002سے 2006تک ہندوستان سے ہر برس3تا27ارب ڈالر بے ایمانی کی رقم غیر ممالک پہنچی ہے۔اس لحاظ سے یہ رقم پانچ برس میں136ارب ڈالر سے زیادہ بنتی ہے۔خیال ہے کہ رقم کا ایک تہائی سوئس بینکوں میں جمع ہے باقی دیگر ٹیکس ہیون میں جمع کی گئی ہیں۔پروفیسر ودیاناتھن فورڈ فائنڈیشن کی ایک دوسری رپورٹ کا حوالہ دیتے ہوئے کہتے ہیں کہ اگر پانچ برس میں سوا ارب ڈالر سے زیادہ رقم یہاں سے گئی تو پھر ساٹھ برس کی لوٹ تو اس سے کئی گنا زیادہ ہوگی۔وہ کہتے ہیں کہ یہ سیاسی معاملہ نہیں ہے یہ ایک قومی مسئلہ ہے اور اس پر سیاست کی نہیں اتفاق رائے کی ضرورت ہے۔اس دوران سوئس بینکنگ ایسوسی ایشن2006رپورٹ کا بار بار حوالہ دیا گیا تھا جس کے مطابق سوئس بینکوں میں ہندوستانیوں کا 1456ارب ڈالر،روسیوں کا 470، انگلینڈ کا390،یوکرین کا 100ارب اور چین کے شہریوں کا ناجائز96ارب ڈالر جمع ہونے کی بات سامنے آئی تھی۔وہیں مارچ2005میں تحقیقی ادارے ٹیکس جسٹس نٹورک نے ایک رپورٹ پیش کی تھی جس میں بتایا گیا تھا کہ دنیا کے امیر افراد نے ساڑھے گیارہ ہزار ارب ڈالر غیر ممالک میں جمع کر رکھے ہیں اور ان میں سے بیشتر رقم سوئزر لینڈ اور لگژ مبرگ جیسے ٹیکس ہیون میں جمع ہیں۔

        کالے دھن اور صحیح معنوںمیں غیر قانونی دولت کے اضافہ سے نہ صرف ہندوستان جیسے ترقی پذیر ممالک بلکہ وہ ترقی یافتہ ممالک بھی پریشان ہیں جو اس پر قابو پانے میں ناکام رہے ہیں۔گلوبل فنانشل انٹیگریٹی ،واشنگٹن میں قائم ایک گروپ ہے مالی بد عنوانی کو بے نقاب کرتا ہے۔اس گروپ نے 2011کی اپنی رپورٹ حال ہی میں شائع کی ہے جس کے مطابق150ترقی پذیر ملکوں سے نکلنے والاکالا دھن تیزی سے بڑھ رہا ہے۔2011میں یہ رقم مجموعی طور پر 9.467کھرب ڈالر تک جا پہنچی ہے جو2010کے مقابلے میں13.7فیصد زائد ہے۔خیال ہے کہ یہ رقم رواں صدی کی پہلی دہائی کی بلند ترین رقم ہے۔گروپ کے سربراہ ریمنڈ بیکر کے بقول عالمی بحران نے عالمی معیشیت کو لڑ کھڑا دیا ہے تاہم غیر قانونی زیر زمین معیشیت پھل پھول رہی ہے۔ہر سال ترقی پذیر ملکوں سے پہلے سے زیادہ رقم نکل رہی ہے۔ اس معاملے نے G-20کے رہنماں کی توجہ بھی اپنی جانب مبذول کرائی ہے۔یہ رہنما اپنے اپنے ملکوں کو2008-09کی کساد بازاری کے اثرات سے نکالنے کے لیے کوشاں ہیں کیونکہ ان ملکوں میں امیر اور غریب شہریوں کے مابین فرق بڑھتا جار ہا ہے ۔جس پر قابو پانے کے لیےیہ رہنما اپنے ٹیکس چوروں سے نمٹ رہے ہیں اور ان کا رپوریٹ اداروں کی خبر لے رہے ہیں جنہیں کالا دھن سفید کرنے اور جرائم سے حاصل کی جانے والی دولت کو چھپانے کے لیے استعمال کیا جاتا ہے۔حقیقت یہ ہے کہ ناجائز رقوم کے بہا کو ٹھیک ٹھیک ناپا نہیں جا سکتا کیونکہ انہیں تحریر نہیں کیا جاتا اور اپنی نوعیت کے اعتبار سے یہ خفیہ ہوتی ہیں-تاہم GFIنے اپنے اعداد و شمار میں اس سال یہ جدت پیدا کی ہے کہ ہانگ کانگ کے راستے باز برآمد(re-exporting)کے علاوہ مختلف اقسام کے تجارتی اعدادو شمار بھی درج کیے ہیں۔GFIکا کہنا ہے کہ ناجائز رقوم اِدھر سے اُدھرکرنے کا سب سے مقبول طریقہ تجارتی اندراج میں ہیرا پھیری کرنا ہے۔جس میں درآمدی اور برآمدی رقوم کی مالیت اصل سے مختلف لکھی جا تی ہے تاکہ ٹیکسوں سے بچا جائے یا رقم کی بھاری منتقلیوں کو چھپایا جائے۔کالا دھن سفید کرنے کا ایک اور مقبول طریقہ'شیل کمپنیاں'ہیں۔کیونکہ یہ کمپنیاں اثاثوں کے اصل مالکان کا نام پتہ معلوم نہیں کرتیں،وہ گمنام مالکان کو بھی کاروبار کی اجازت دیتی ہیں۔G-8(بڑی صنعتی اقوام) نے ماہ جون میں متفقہ طور پر کہا ہے کہ گمنام شیل کمپنیاں ایک بین الاقوامی مسئلہ ہیں۔برطانوی حکومت بھی اس مسئلے پر قابو پانے کے لیے سنجیدہ اقدامات کر رہی ہے۔عالمی رہنماں کے ایک پینل نے اقوام متحدہ سے سفارش کی ہے کہ وہ 2015سے 'نئے عالمی ترقیاتی اہداف'مقرر کرتے وقت غربت کے خاتمے کے اپنے ایجنڈے پر عمل درآمد کے لیے ناجائز رقوم کے بہا پر قد غن کو بھی اپنا ایک مقصد بنائے۔

        کالے دھن پر گرفت کے تعلق سے ہندوستان کی موجودہ حکومت نے اپنے انتخابی منشورپر عمل درآمد کرتے ہوئے سپریم کورٹ کے سابق جج جسٹس این بی شاہ کی قیادت میں کالے دھن معاملے کے لیے خصوصی تحقیقاتی ٹیم تشکیل دی ہے۔جسٹس شاہ نے فون پر میڈیا سے بات کرتے ہوئے کہا کہ تحقیقات کے دوران گرچہ متعدد پیچیدگیوں کا سامنا کرنا پڑے گا اس کے باوجود انہیں یقین ہے کہ معاملہ کی جلد از جلد تحقیقات مکمل کر لی جائے گی ۔یہ بات پیش نظر رہنی چاہیے کہ جسٹس شاہ اڈیشہ اور گوا میں غیر قانونی خام لوہے کی کانکنی معاملہ کے کمیشن کے صدر نشیں تھے جس کی اندرون دو ماہ میں ہی انہوں نے اپنی پہلی عبوری تحقیقاتی رپورٹ داخل کردی تھی۔لہذا اپنے پچھلے ریکارڈ کو دیکھتے ہوئے نہ صرف انہیں بلکہ حکومت ہند کو بھی توقع ہے کہ کالے دھن معاملے میں بھی تحقیقاٹی رپورٹ ایس آئی ٹی کے ادخال میں تاخیر نہیں ہوگی۔گزشتہ دنوں بی جے پی نے الیکشن مہم کے دوران کالے دھن پر بہت زور شور سے بات کی تھی ،شاید یہی وجہ ہے کہ حکومت نے اپنی توجہ مبذول کرتے ہوئے جسٹس شاہ کی قیادت میں ٹیم تو تشکیل دے دی ہے لیکن دیکھنا یہ ہے کہ وہ اس تعلق سے ان لوگوں پر کس طرح گرفت کرے گی جو موجودہ یا سابقہ دنوں خود ان ہی کی پارٹی یا حکومت کا حصہ رہے ہیں۔اس کے باوجود رپورٹ کامنظر عام پر آنا اور اس پر غیر متعصبانہ عمل درآمدثابت کرے گا کہ حکومت اس معاملے میں کس قدر سنجیدہ ہے۔لہذا جب تک کہ یہ عمل مکمل نہ ہو جائے حسن ظن ہی رکھا جائے گا۔

        بڑھے ہوئے کالے دھن اور غیر قانونی دولت کے اضافے کے پس منظر میں دیکھنا یہ بھی ہے کہ ملک عزیز ہند میں غربت و افلاس کی صورتحال کیا ہے؟آکسفورڈ یونیورسٹی یوکے کی تحقیقات و تخمینہ کے روشنی میں فی الوقت ہندوستان میں 340ملین افراد غربت و افلاس میں مبتلا ہیں جن میں زیادہ تر دیہی علاقوں کے پسماندہ افراد ہیں۔رپورٹ کی روشنی میں افغانستان کے بعدہندوستان دنیا بھر میں غربت و افلاس کے لحاظ سے دوسرے نمبر پر ہے۔آکسفورڈ یونیورسٹی کی یہ رپورٹMulti-Dimensional Poverty Index (MPI) 2014کے مطابق تیار کی گئی ہے۔Multi-Dimensional Poverty Index (MPI)غربت و افلاس کا وہ پیمانہ ہے جہاںصحت ،تعلیم اورمعیار زندگی،ہر تین پہلوں سے غربت کا تخمینہ لگایا جاتا ہے۔قابل توجہ پہلو یہ ہے کہ ہر تین پہلوں سے افلاس زدہملک میں جہاںناخواندگی، غربت ، بے روزگاری اور صحت عامہ جیسے مسائل میں ہر صبح اضافہ ہی ہو تاہو۔ایسے ملک میں کالے دھن میں اضافہ ،اور اس کا بڑھتا ہوا گراف خود شاہد ہے کہ اہل ملک کس قدر مفلسی وبے بسی سے دوچار ہیں۔واقعہ یہ ہے کالادھن،غیر قانونی دولت میں اضافہ،بڑے پیمانہ پر ٹیکس چوری ،یہ تمام کام درمیانہ یانچلے درجے کے شہری انجام نہیں دیتے بلکہ اِن تمام غیر قانونی کاموں میں اکثریت ان سفید پوشوں کی ہے جویا توسابقہ یا موجودہ حکومتوں میں شامل ہیں یا پھر وہ سرکردہ شخصیات جو خود حکومتوں کے تشکیلی عمل میں معاون و مددگار ثابت ہوئے ہیں۔اس پس منظر میں کیونکر یہ توقع کی جا نی چاہیے کہ کالے دھن میں ملوث اِن سرکردہ حضرات و شخصیات کی لگام کسی جا سکے گی؟جبکہ نہ انہیں دنیا کا خوف ہو اور نہ ہی آخرت کا !


vvvvvvv

CONVERSATION

Back
to top